عمران خان کا دورہ پنڈدادنخان۔تحریر: محمدشہبازبٹ

ضلع جہلم کی تحصیل پنڈدادنخان جس کا شمار کبھی پاکستان کے امیر ترین علاقوں میں ہوتا تھا اور اس تحصیل نے کئی سال پہلے فیصل آباد جیسے ڈویژن کو پانچ لاکھ روپے بطور قرض دیئے جو شاید آج تک واپس نہ ہوئے وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ساتھ حالات تبدیل ہوتے گئے سیاسی رخ اور شخصیات بھی تبدیل ہوئیں تو پنڈدادنخان جیسی تاریخی تحصیل اور علاقہ جس کا نمک پاکستان اور پاکستان سے باہر رہنے والے بھی کھاتے ہیں اس کے حالات تبدیل ہونا شروع ہوگئے اس تحصیل سے تعلق رکھنے والے متعدد جوان وطن عزیز کا دفاع کرتے ہوئے شہید اور غازی بنے یہ تحصیل گزشتہ تیس پینتیس سال سے پسماندگی کی علامت بنی ہوئی ہے پاکستان اور سوئی گیس جیسی سہولیات سے محروم اس دھرتی کے باسیوں نے ہمیشہ مسلم لیگ ن اور نوابزادہ خاندان کے ساتھ وفا کی یہاں تک کے مشرف کے آمرانہ دور حکومت میں بھی اس حلقہ سے مسلم لیگ ن کے امیدوار نے کامیابی حاصل کی لیکن افسوس کہ اس دھرتی کے باسیوں کو بنیادی سہولیات اور پینے جیسی پانی کی سہولت سے محروم رکھاگیا عوام کو سہانے سپنے تو ضرور دکھائے گئے موجودہ دور حکومت میں پنجاب کے خادم اعلی کہلانے والے میاں شہباز شریف نے چھ مرتبہ پنڈدادنخان آمد کا اعلان کیا ترقیاتی پیکیج اور انڈسٹریل زون کا لالی پاپ دیاگیا یہاں بجلی کے گھر بنانے کے اعلانات کیے گئے لیکن نہ میاں شہباز شریف اس تحصیل میں آئے اور نہ وعدے ایفا ہوئے اس پر عوام نے مسلم لیگ ن پر عدم اعتماد کا اظہار کرنا شروع کردیا ہے جس کا اندازہ اس سے لگایا جا سکتا ہے کہ ایم این اے نوابزادہ اقبال مہدی خان کی وفات کے بعد ان کے فرزند نوابزادہ مطلوب مہدی ضمنی الیکشن میں اترے تو ان کے مقابلے پی ٹی آئی کے پلیٹ فارم سے فواد چوہدری نے قسمت آزمائی کا فیصلہ کیا عام رائے یہ ہی تھی کہ چونکہ 2013ء کے عام انتخابات یں اقبال مہدی نے74ہزار کی لیڈ حاصل کی تھی تو ضمنی الیکشن میں ہمدردی کا ووٹ بھی مطلوب مہدی کو پڑے گا اور برتری ایک لاکھ یا اسی نوے ہزار تک جائے گی مسلم لیگ ن کے چالیس سے زائد ایم این ایز ،ایم پی ایز، وزیروں اور مشیروں پر مشتمل وفد نے بھی ن لیگی امیدوار کی بھرپور مہم چلائی لیکن جب رزلٹ آیا تو پنڈدادنخان کے تھیلے راستے میں رک گئے کبھی گاڑی پنکچر ہونے کا بہانہ بنایا گیا تو کبھی کچھ اور وجوہات بتائی گئیں خیر تمام تر حربوں کے باوجود مطلوب مہدی سات ہزار اور کچھ ووٹوں سے جیت گئے یا جتوا دیئے گئے مسلم لیگ ن کے لیے یہ رزلٹ حیران کن بلکہ پریشان کن تھا عوامی رائے کے مطابق اخلاقی طور پر مسلم لیگ ن ہار گئی تھی خیر ضمنی الیکشن کے بعد دوبارہ اس حلقہ کی عوام کو سہانے مستقبل کے خواب دکھائے گئے وزیراعلی کے دوروں اور ترقیاتی پیکیج کا ڈھنڈورا ایک دفعہ پھر پیٹا گیا لیکن پھر وہی ہوا متعدد بار شہباز شریف اعلان کرکے نہ آئے جبکہ اس کے مقابلے میں اگر پی ٹی آئی اورفواد چوہدری کو دیکھا جائے تو انہوں نے اپنی مدد آپ کے تحت اس تحصیل میں میڈیکل کیمپ اور دیگر کام بھی کروائے فواد چوہدری نے ٹیلی ویژن اور میڈیا پر اس حلقہ کے عوام کی آواز اٹھائی یہاں تک کہ اس پسماندہ تحصیل کے انتہائی پسماندہ نواحی علاقوں میں اپنے کپتان کو لیکر آئے ضمنی الیکشن میں عمران خان لِلہ کھیوڑہ پنڈدادنخان سے ہوتے ہوئے جہلم آئے جو ملکی تاریخ میں اس تاریخ کا ریکارڈ ہے کہ کوئی عالمی سطح کا لیڈر ان پسماندہ علاقوں میں عوام کی بات سننے اور انہیں اپنا پیغام دینے کیلئے آیا ہو اگر بات کی جائے عمران خان کے دوسرے دورے کی جو چند روز قبل یعنی چودہ مارچ کو ہوا تو اس کا کریڈٹ بھی جہلم کے سپوت فواد چوہدری کو جاتا ہے فواد چوہدری پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان سمیت دیگر پارٹی قائدین کو لیکر ایسے پسماندہ علاقوں میں پہنچے جہاں عالمی سطح کا کوئی لیڈر آنا تو دور کی بات آنے کا سوچ بھی نہیں سکتا عمران خان بذریعہ موٹروے لِلہ انٹرچینج پہنچے جہاں ان کا فقید المثال استقبال کیاگیا پھر وہ تنظیم سازی مہم کے سلسلے میں لِلہ پہنچے جہاں حاجی ناصر لِلہ کی رہائش گاہ پر کیمپ کا دورہ اور پھر کارکنوں سے خطاب کیا سابق ضلع ناظم چوہدری فرخ الطاف بھی اس موقع پر موجود تھے یہاں اڑھائی سے تین ہزار لوگوں کا مجمع تھا اس کے بعد گولپور میں لگائے گئے کیمپ میں تین سے چار سو لوگ موجود تھے پھر عمران خان پنڈدادنخان کے شالیمار چوک میں پہنچے تو جہاں انہوں نے بے باکی کا مظاہرہ کرتے ہوئے گاڑی پر کھڑے ہو کر دو اڑھائی ہزار لوگوں سے خطاب کیا اس کے بعد پی ٹی آئی کے چیئرمین کھیوڑہ پہنچے جہاں اڑھائی سے تین ہزار لوگ موجود تھے عمران خان نے کنٹینر پر کھڑے ہو کر عوام سے خطاب کیا ان کے حقوق کی بات کی اور ممبر شپ پر زور دیا یہاں ہمیں اسٹیج پر پیر انیس حیدر بھی دکھائی دیئے جو سابق ضلع ناظم چوہدری فرخ الطاف اور چوہدری فواد حسین کے ساتھ کھڑے تھے اس کے بعد عمران خان فواد چوہدری کے ہمراہ احمد آباد میں راجہ شاہ نواز کے ڈیرے پر پہنچے جہاں پچیس سو سے تین ہزار لوگوں کا اکٹھ تھا وہاں بھی عمران خان نے مختصر خطاب کیا اگر عمران خان کے دورے پر نظر ڈالی جائے تو انہوں نے پانچ سات کلو میٹر کے فاصلے پر پانچ مختلف مقامات پر عوام سے خطاب کیا پانچ مقامات پر اگر عوام کی تعداد کا اندازہ لگایا جائے تو بارہ سے چادہ ہزار تک عوام کی موجود تھی چند کلو میٹر کے فاصلے پر عوام کی اتنی بڑی تعداد میں شرکت ایک کامیاب شو اور مستقبل میں اس حلقہ میں تبدیلی کا اشارہ ہے لیکن دیکھنا یہ ہے کہ تحریک انصاف فواد چوہدری کے ساتھ پی پی27میں کونسا کھلاڑی میدان میں اتارتی ہے اور کس حد تک دھڑے بندی اور اختلافات پر قابو پاتی ہے اس حلقہ کی عوام شاید اب جاگ اٹھی ہے اور غلامی کی زنجیروں سے آزاد ہو کر بہتر مستقبل کے خواب دیکھ رہی ہے۔

Powered by Dragonballsuper Youtube Download animeshow