پاکستان کی وزارت داخلہ نے انٹیلی جنیس ادارے آئی ایس آئی کی سفارش پر جمعے کے روز امریکہ کی فنڈنگ سے چلنے والے ریڈیو فری یورپ کے پشتو زبان کے ریڈیو ’ مشال ‘کی سرگرمیوں پر پابندی لگا دی ہے۔ وزارت داخلہ کی جانب سے جاری ہونے والے ایک نوٹیفیکشن میں اسلام آباد کے چیف کمشنر اور پولیس چیف سے کہا گیا ہے کہ آئی ایس آئی کی رپورٹ کے مطابق یہ ریڈیو ایسے پروگرام نشر کر رہا ہے جو پاکستان کے مفادات کے خلاف ہیں اور وہ دشمن انٹیلی جینس ایجنسی کے پراپیگنڈے سے مطابقت رکھتے ہیں۔ ڈان میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ وزارت داخلہ کا کہنا ہے کہ مشال ریڈیو سے نشر کیے جانے والے پروگرام بنیادی طور پر 4 نکات پر مرکوز ہیں۔ جن میں پاکستان کو دہشت گردی اور عسکری گروپوں کی محفوظ پناہ گاہوں کے ایک مرکز کے طور پر پیش کرنا، پاکستان کے بارے میں یہ پراپیگنڈہ کرنا کہ وہ ایک ناکام ریاست ہے کیونکہ وہ اپنی اقلیتوں اور پٹھانوں کو سیکیورٹی فراہم کرنے میں ناکام رہا ہے، صوبہ خیبر پختون خوا ، وفاقی کنٹرول کے قبائلی علاقے فاٹا اور بلوچستان کے متعلق یہ تاثر دینا کہ وہ وہاں پاکستانی ریاست کا طلسم ٹوٹ رہا ہے اور لوگوں کو ریاست اور ریاستی اداروں کے خلاف بھڑکانے کے لیے حقائق کو تروڑ مڑوڑ کر پیش کرنا۔ وزارت داخلہ نے کہا ہے کہ ان چیزوں کے پیش نظر اسلام آباد میں قائم اس ریڈیو کے علاقائی دفتر اور اس کی سرگرمیوں کو بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ جمہوریہ چیک میں قائم ریڈیو فری یورپ نے فاٹا کے لیے ریڈیو مشال کے نام سے اپنی نشریات کا آغاز 2010 میں کیا تھا جس کا مقصد انتہاپسند گروپس کے ریڈیو اسٹیشنوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کے پیش نظر ایک متبادل ریڈیو فراہم کرنا تھا۔ ریڈیو فری یورپ ان 9 میڈیا اداروں میں شامل ہے جس پر روس نے پچھلے مہینے بیرونی ایجنٹ ہونے کا الزام لگایا تھا۔

پاکستان نے پشتو ریڈیو مشال پر پابندی لگا دی

پاکستان کی وزارت داخلہ نے انٹیلی جنیس ادارے آئی ایس آئی کی سفارش پر جمعے کے روز امریکہ کی فنڈنگ سے چلنے والے ریڈیو فری یورپ کے پشتو زبان کے ریڈیو ’ مشال ‘کی سرگرمیوں پر پابندی لگا دی ہے۔

وزارت داخلہ کی جانب سے جاری ہونے والے ایک نوٹیفیکشن میں اسلام آباد کے چیف کمشنر اور پولیس چیف سے کہا گیا ہے کہ آئی ایس آئی کی رپورٹ کے مطابق یہ ریڈیو ایسے پروگرام نشر کر رہا ہے جو پاکستان کے مفادات کے خلاف ہیں اور وہ دشمن انٹیلی جینس ایجنسی کے پراپیگنڈے سے مطابقت رکھتے ہیں۔

ڈان میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ وزارت داخلہ کا کہنا ہے کہ مشال ریڈیو سے نشر کیے جانے والے پروگرام بنیادی طور پر 4 نکات پر مرکوز ہیں۔ جن میں پاکستان کو دہشت گردی اور عسکری گروپوں کی محفوظ پناہ گاہوں کے ایک مرکز کے طور پر پیش کرنا، پاکستان کے بارے میں یہ پراپیگنڈہ کرنا کہ وہ ایک ناکام ریاست ہے کیونکہ وہ اپنی اقلیتوں اور پٹھانوں کو سیکیورٹی فراہم کرنے میں ناکام رہا ہے، صوبہ خیبر پختون خوا ، وفاقی کنٹرول کے قبائلی علاقے فاٹا اور بلوچستان کے متعلق یہ تاثر دینا کہ وہ وہاں پاکستانی ریاست کا طلسم ٹوٹ رہا ہے اور لوگوں کو ریاست اور ریاستی اداروں کے خلاف بھڑکانے کے لیے حقائق کو تروڑ مڑوڑ کر پیش کرنا۔

وزارت داخلہ نے کہا ہے کہ ان چیزوں کے پیش نظر اسلام آباد میں قائم اس ریڈیو کے علاقائی دفتر اور اس کی سرگرمیوں کو بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

جمہوریہ چیک میں قائم ریڈیو فری یورپ نے فاٹا کے لیے ریڈیو مشال کے نام سے اپنی نشریات کا آغاز 2010 میں کیا تھا جس کا مقصد انتہاپسند گروپس کے ریڈیو اسٹیشنوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کے پیش نظر ایک متبادل ریڈیو فراہم کرنا تھا۔

ریڈیو فری یورپ ان 9 میڈیا اداروں میں شامل ہے جس پر روس نے پچھلے مہینے بیرونی ایجنٹ ہونے کا الزام لگایا تھا۔

x

Check Also

شمالی وزیرستان: حکومت سے معاہدہ طے پانے کے بعد دھرنا ختم

احتجاجی دھرنے میں شریک قبائلی رہنمائوں پر مشتمل وفد نے جمعرات کو پاکستانی فوج کے شمالی وزیرستان میں تعینات جنرل آفیسر کمانڈنگ اور پولیٹیکل ایجنٹ سے مذاکرات کیے تھے۔

Powered by Dragonballsuper Youtube Download animeshow